"لوک مت اخبار کے خلاف احتجاج اور خیر کا "پہلو

محمد فراز احمد, نظام آباد
لوک مت اخبار کے ایک صفحہ پر شائع ہونے والے گستاخانہ خاکہ پر تمام ہی مسلمان پریشان اور اخبار کے خلاف احتجاج میں سرگرم ہے تو ایک مقام پر اخبار کے دفتر پر توڑ پھوڑ کی خبر بھی موصول ہو ئی ہے. خیر یہ تمام باتیں ایک طرف ہے اور یہ ایک فطری بات بھی ہیکہ مسلمان کبھی آخری رسولؐ کی شان میں گستاخی کو برداشت نہیں کرتے. لیکن ہم اس کا ایک دوسرا پہلو بھی دیکھیں جس سے ہمیں مثبت راہ نظر آتی ہے. دور حاضر میں ماضی کی بہ نسبت اسلام کی دعوت کو عام کرنے کے طریقے باآسانی دستیاب ہیں اور پھر یہ لوکمات اخبار کی طرف سے ہو ئے گستاخانہ عمل پر ردعمل کو ہم مثبت سمت
اور ایک مثبت راہ دے سکتے ہیں. لوگوں نے احتجاج کرتے ہو ئے اخبار کو جلایا, کیس درج کیا اور دیگر طریقوں سے اپنا احتجاج درج کیا. لیکن اس حادثہ کے بعد ہمارے پاس دعوت دین اور نبیؐ کی تعلیمات کو اس اخبار کے ذریعہ پھیلانے کا بہترین موقع ہے. اس اخبار کے ذمہ داران سے بات کر کے معافی نامہ کے ساتھ نبیؐ کی تعلیمات کو اور انکے پیغامات کو ارسال کیا جاسکتا ہے , ایک سیمینار منعقد کیا جاسکتا جس میں مختلف مزاہب کے رہنماؤں کو مدعو کیا جا سکتا ہے اور اسلام کے پیغام کو عام کیا جا سکتا ہے.نیز اس طرح کے دیگر Activities کو انجام دیا جاسکتا ہے اور اسلام کے صحیح پیغام کو عام کیا جا سکتا ہے.محض احتجاج کرنے سے معاملہ کا حل ممکن نہیں . اللہ ہمیں ہر معاملہ میں خیر کے پہلو کو سمجھنے کی توفیق عنایت کریں. آمین.

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.