قافلہ کیوں لٹا؟

کتاب قافلہ کیوں لٹا؟ افغان نژاد امریکی مورخ تمیم انصاری کی شہرہ آفاق تصنیف "Destiny Disrupted” کا اردو ترجمہ ہے جس کا ترجمہ، مقدمہ و حواشی محمد ذکی کرمانی صاحب نے کیا. کتاب 400 صفحات پر مشتمل ہے، لیکن کتاب کا سائز عام کتب کے مقابلہ کچھ بڑا اور فونٹ سائز بھی چھوٹا ہے جس کی وجہ سے یہ کتاب تقریباً 800 صفحات کے قریب ہوجاتی ہے. 2017 میں ایوی روز اکیڈمی، علی گڑھ نے کتاب کی اشاعت کی.

یہ کتاب عالم اسلام کی تاریخ پر ایک مجتہدانہ نظر کے طور پر لکھی گئی جو کہ محمد صلعم کی پیدائش سے قبل سے لیکر 21 ویں صدی تک کے عرصے پر محیط ہے. اس کتاب کی خاص بات یہ ہیکہ کتاب کے مصنف مغربی دنیا میں رہتے ہیں اور وہاں کے نظریات و افکار سے بخوبی واقف ہیں جس کی بنا پر اس کتاب میں مغرب کی عیاریوں پر بھی کھل کر گفتگو ملتی ہے. مصنف کہتے ہیں کہ وہ ایک نصابی کتب کی تیاری کے ذمہ دار بنائے گئے تھے، اس دوران ان پر مغربی مفکرین و تاریخ دانوں کے اسلاموفوبیا کا انکشاف ہوا ہیکہ اس نصابی کتاب کی تیاری کے دوران اسلامی دور کو محض کچھ صفحات یا ایک باب تک محدود کردیا جاتا ہے تاکہ طلبہ اس سے زیادہ واقف نہ ہو سکیں، اسی بنیاد پر انھوں نے طئے کیا کہ وہ اسلامی تاریخ پر مفصل لکھیں گے. اسی کے بعد یہ کتاب منظر عام پر آئی.

کسی نے بہت خوب کہا کہ جو انسان مطالعہ کرتا ہے وہ بہت ساری زندگیاں جیتا ہے اور جو مطالعہ نہیں کرتا وہ صرف ایک ہی زندگی جیتا ہے، وہ اسطرح کے جب انسان مطالعہ کرتا ہے تو اسے صدیوں پرانی شخصیات، افکار، نظریات، تہذیب و تمدن اور رہن سہن وغیرہ سے واقفیت حاصل ہوتی ہے اسی طرح وہ سینکڑوں انسانوں سے واقفیت حاصل کرتا ہے اور ان کی زندگیوں سے سبق حاصل کرتے ہوئے اقدامات لیتا ہے. کتاب کے مطالعہ کے دوران بہت ساری تہذیبوں اور افکار و نظریات سے آگاہی ہوئی. 

تمیم انصاری صاحب نے نہ صرف اسلامی دنیا کا احاطہ کیا بلکہ مغربی و غیر اسلامی دنیا کا بھی احاطہ کرتے ہوئے مکمل تاریخ کو سمویا ہے. نبی صلعم کی زندگی، چار خلفاء، بنی امیہ، بنو عباس، خلافت عثمانیہ سے لیکر مغل دور پھر ہندوستان کی سیاست، دوسری طرف صلیبی و عیسائی دنیا، چینی تہذیب سے لیکر انگریزوں کا تسلط، آزادی ہند اس کے بعد امریکہ کی اسلام دشمنی و 9/11 کا بھی احاطہ کیا. 

کتاب کے مطالعہ کے دوران شعیہ سنی اختلافات کی بنیاد، ان اختلافات کی سنگینی،اس کے مذہبی و سیاسی پہلو، خلافت کی ملوکیت میں تبدیلی اور احیائے اسلام کی تحریکات بالخصوص جمال الدین افغانی، ان کے شاگردوں کی منظم کردہ اخوان المسلمین وغیرہ قابل ذکر ہیں. اس دوران امام احمد بن حنبل، ابن تیمیہ، صوفیاء اکرام کا دور، جلال الدین رومی، امام غزالی وغیرہ جیسی شخصیات سے بھی ملاقات ہوئی، ساتھ ہی تاریخ اسلام کی خونخوار قوم منگولوں سے بھی واقفیت ہوئی. مصنف نے اس بات کا بھی تذکرہ بعض مورخین کے حوالے سے دیا کہ آجکل امریکہ کی طرف سے جو تباہی مچی ہے اس کے سامنے منگول کی وحشت بہت کم ہے، بہرحال تاریخ میں ہمیشہ ظلم کم یا زیادہ حالات کے حساب سے جاری رہتا ہے. 

مصنف نے نہ صرف اشخاص کا تعارف پیش کیا بلکہ ان کے نظریات پر بھی گفتگو کی ساتھ ہی ساتھ ان کا تقابل ان کے ہم عصر اور ماضی میں گزرے دوسرے مفکرین سے بھی کرتے ہوئے اپنی تحقیق پیش کی. اس کے علاوہ مصنف نے کتاب میں تقریباً 21 تاریخی نقشے بھی شامل کیے ہیں جس کے ذریعہ سے مختلف حکومتوں اور مختلف جنگوں کی حکمت عملیوں کو سمجھنے میں آسانی ہوتی ہے. الغرض یہ کتاب انتہائی اہمیت کی حامل اور اسلامی تاریخ میں ایک اہم دستاویز کی حیثیت رکھتی ہے.

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.